news
English

نیوزی لینڈ کیخلاف وارم اَپ میچ میں شکست، رضوان نے ’جواز‘ پیش کردیا

قومی ٹیم کے وکٹ کیپر بیٹر نے کیویز کے خلاف میچ میں ناقص فیلڈنگ کا بھی اعتراف کرلیا۔

نیوزی لینڈ کیخلاف وارم اَپ میچ میں شکست، رضوان نے ’جواز‘ پیش کردیا

نیوزی لینڈ کے خلاف وارم اَپ میچ میں گرین شرٹس کی ناقص کارکردگی پر محمد رضوان کا بیان سامنے آگیا۔ 
پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کی جانب سے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر (ایکس) پر ایک ویڈیو جاری کی گئی ہے جس میں وکٹ کیپر بیٹر محمد رضوان پاکستان کی نیوزی لینڈ کے خلاف وارم اَپ میچ میں ناقص کارکردگی پر اپنا موقف پیش کررہے ہیں۔ 
وکٹ کیپر بیٹر نے کہا کہ کیویز کے خلاف وارم اَپ میچ میں کئی تبدیلیاں کی تھیں جس کی وجہ سے مثبت نتائج سامنے نہیں آئے تاہم بینچ پر بیٹھے لڑکوں کو موقع دیا گیا تاکہ ان کی کارکردگی کو جانچا جاسکے۔
انہوں نے اعتراف کیا کہ نیوزی لینڈ کیخلاف میچ میں ہماری فیلڈنگ غیر معیاری تھی اور بولنگ کے شعبے میں شاہین شاہ آفریدی، افتخار احمد، شاداب خان کے10، 10 اوورز نہیں تھے، جس سے فرق پڑا۔ 

قبل ازیں نامور بھارتی صحافی وکرانت گپتا نے بھی قومی ٹیم کی ناقص کارکردگی پر سوال اُٹھاتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان ایسی فیلڈنگ، کیچنگ اور اسپن اٹیک سے اچھی ٹیموں کے خلاف بڑے مقابلے میں جیت کیلئے بہت جدوجہد کرے گا۔ 
وکرانت گپتا کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کی موجودہ ٹیم کا یہ رویہ ہے کہ بھی کوئی بھی حریف جب دباؤ ڈالتا ہے تو ٹیم دفاعی انداز میں چلی جاتی ہے، پاکستان کو ابتدائی 10 اوورز میں نئی ​​گیند کے ساتھ اپنے فاسٹ بولرز پر انحصار کرنا پڑے گا، ورنہ وہ بیک فٹ پر چلے جائیں گے۔ 
واضح رہے کہ 345 رنز کے ہدف کے تعاقب میں قومی بولرز ایک بار پھر حریف ٹیم کے کھلاڑیوں کو پویلین بھیجنے میں ناکام رہے تھے جبکہ گرین شرٹس کا اسپن ڈیپارٹمنٹ بری طرح فلاپ نظر آیا، محمد نواز نے 7 اوورز میں 55، اسامہ میر نے 10 اوورز میں 68 جبکہ آغا سلمان نے 8 اوورز میں 60 رنز لٹائے تھے۔ 
مجموعی طور پر اسپنرز نے 25 اوورز میں 183 رنز دے کر محض 3 کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی تھی۔ 

دوسری جانب فاسٹ بولنگ کے شعبے میں بھی حارث رؤف اور محمد وسیم جونئیر کی خوب پٹائی ہوئی جبکہ حسن علی نے ابتداء میں وکٹ لی تاہم کوئی بالر ان کا ساتھ دینے میں ناکام رہا۔