English

پی ایس ایل 5 ؛ کورونا سے 20 کروڑ روپے کا دھچکا لگ گیا

بنگلادیش کے خلاف ٹیسٹ سیریز ملتوی ہونے کی وجہ سے بھی 30سے 40 لاکھ ڈالر کا خسارہ الگ برداشت کرنا پڑے گا

فوٹو: پی سی بی

کورونا وائرس سے پی ایس ایل5 کو 20کروڑ روپے کا دھچکا لگ گیا، اس میں گیٹ منی سے ہونے والا نقصان شامل ہے۔

ٹیلی کانفرنس میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پی سی سی کے چیف ایگزیکٹیو وسیم خان نے کہا کہ کورونا وائرس عالمی مسئلہ ہے، دنیا بھر میں اسپورٹس مقابلے بند ہو گئے، ہم سے جہاں تک ممکن ہو سکا پی ایس ایل5 کے میچز جاری رکھنے کی کوشش کرتے رہے، ہم جو کچھ کر سکتے تھے وہ کیا، وفاق،سندھ اور پنجاب کی حکومتوں سے ایڈوائزری ملنے کے بعد مقابلے خالی میدانوں پر کرانے کا فیصلہ کیا۔

ایلمنیٹرز مقابلوں کو سیمی فائنلز میں بدل کر فائنل 22 مارچ سے18 تاریخ تک لے آئے تھے، ہمارے لیے کھلاڑیوں اور تماشائیوں کی حفاظت اولین ترجیح تھی، اس لیے پی ایس ایل کو ملتوی کیا۔

وسیم خان نے کہا کہ التواکے باوجود مجموعی طور پر لیگ کے کافی میچز ہوگئے، اس کی وجہ سے بہت بڑا مالی خسارہ نہیں ہوا، کرکٹ کا معیار بھی شاندار رہا، ایک اندازے کے مطابق پی ایس ایل میں ہمیں 20کروڑکے نقصان کا سامنا ہے، ہمیں گیٹ منی کی وجہ سے خسارہ برداشت کرنا پڑا، مکمل اعداد و شمار بھی 2 ہفتے میں سامنے آجائیں گے،اس وقت ہی بتا سکیں گے کہ کس مد میں کیا خسارہ ہوا ہے، بنگلادیش سیریز ملتوی ہونے سے بھی 30سے 40 لاکھ ڈالر کا نقصان ہوا،اس کے باوجود بورڈ مالی طور پر مستحکم ہے۔

انھوں نے کہا کہ خوش قسمتی سے اکتوبر میں ایشیا کپ اور زمبابوے کیخلاف میچز سے قبل پاکستان کی کوئی ہوم یا انٹرنیشنل سیریز نہیں ہے، اس وجہ  سے زیادہ مالی نقصان کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا، شرٹس اسپانسرشپ کا کنٹریکٹ ہونا ہے، نشریاتی حقوق کا معاہدہ بنگلادیش سے سیریز کے ساتھ ختم ہونا تھا، نئے معاہدوں سے بھی آمدنی کے مواقع پیدا ہوں گے، اس سلسلے میں پہلے سے جاری بات چیت کو آگے بڑھائیں گے، فی الحال مسائل نہیں، اگر صورتحال ایک سال یا 14ماہ تک برقرار رہی تو پھر فکر مندی کی بات ہوگی، اس وقت پوری دنیا کے اسپورٹس ہی مشکلات کا شکار اور حالات بہتر ہونے کے منتظر ہیں۔

وسیم خان نے کہا کہ حالات بہتر ہونے کے بعد آگے جا کر کرکٹ گراؤنڈز اور ڈومیسٹک انفرا اسٹرکچرکو مزید بہتر بنانے کی کوشش کریں گے، پاکستانی متاثرین کورونا کیلیے فنڈ قائم کرنے کے سوال پر وسیم خان نے کہا کہ وائرس کی وجہ سے چیزیں بہت تیزی سے ہوئیں، ہم ابھی تک اس معاملے پر اکٹھے نہیں بیٹھ سکے، چیئرمین پی سی بی کے ساتھ ملاقات میں جائزہ لیں گے کہ کیاکچھ کر سکتے ہیں، پی سی بی اپنے شائقین کیلیے جو کچھ کر سکا وہ ضرور کرے گا۔